جنگ ِ آزادی اور مسلمانوں پر ظلم و ستم : Jang e Azadi 1857

   جنگ پلاسی کے بعد انگریزوں نے مسلمانوں کو نپے تلے منصوبہ کے تحت کچلنا شروع کیا اور 1857ء میں مسلمانوں کی جنگ ِآزادی تک یہ عمل جاری رہا۔ آزادی کی یہ جنگ اس طبقہ کے حق میں تباہ کن ثابت ہوئی ،جو اپنے ماضی کی شان و شوکت کو اب تک یاد کر رہا تھا اور بدلے ہوئے حالات کے ساتھ مفاہمت پیدا کرنے میں نا کام رہا تھا۔

 پنجاب کے مسلمان پہلے ہی نجیت سنگھ اور اس کے یورپی جرنیلوں کے جوتے تلے کراہ رہے تھے۔ ان میں سے پشاور میں متعین اطالوی جنرل اداٹیبائل صبح کے ناشتے اور ملاقاتیوں سے ملنے سے پہلے اپنی کوٹھی کے پورچ سے باہر چھ پٹھانوں کو پھانسی دیتا تھا۔ اگر انگریز نہ آتے تو رنجیت سنگھ کے یہ پانچوں جرنیل کابل، سندھ اور بلوچستان کو بھی فتح کر چکے ہوتے۔ امر واقعہ یہ ہے کہ انگریزوں کی آمد نے شمال مغربی ہندوستان کے مسلمانوں کو بچا لیا۔ 

(چشم دید از فیروز خان نون) 

 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s